February 22, 2018=National News

نااہل ایک بارپھر نا اہل ہوگئے ، نواز شریف کی نا اہلی پر تحریک انصاف کاجشن و مٹھائیاں تقسیم، کارکنوں کے بھنگڑے

These excesses will take Nawaz Sharif/Muslim League (N) even higher. Remember, when injustice crosses the limit it gets erased," said Maryam, who after the announcement of the judgement changed her Twitter display photo to one of her father with the accompanying text reading, "I too am Nawaz and I know how to Alleging that the court's ruling has robbed a political party of its democratic right to choose its leader, the statement said Nawaz Sharif's leadership "does not depend on a designation or rankControversial efforts to take away leadership from political parties have failed in the past as well, the handout said, adding that the PML-N will continue its struggle for the rule of law and democracy under Sharif's leadership.Chief Justice Mian Saqib Nisar on Tuesday said the Supreme Court's queries to better understand others' perspective should not be construed as the court's interference in the legislative process.I was not willing to say this but it had become necessary. The elected representatives of the 207 million people are being dubbed as thief, robber and mafia. Sometimes threats are being hurled that we [judges] will nullify the legislation that you [parliamentarians] have passed,” Abbasi said in his apparent reference to the ongoing hearing of the petitions challenging the

کرپشن کی طرح نا اہلی کے ریکارڈ بھی توڑ دیے ہیں اور سب سے زیادہ مرتبہ نا اہل ہوکر ثابت کر دیا ہے کہ اب ان کا سیاسی بوریا بستر ہمیشہ کیلئے گول ہو گیا ہے ،سابق اراکین اسمبلی میاں خالداور آجاسم شریف کے علاوہ جمشید بٹ ،ارشد ساہی ،فرخ جاوید مون ، شیخ عامر ،لکی خان اور رانا ثاقب بھی موجود تھے ۔عبدالعلیم خان نے کارکنوں کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ نوازلیگ نے اپنے کارکنوں کو شرمندگی کی اتھاہ گہرائیوں میں دھکیل دیا ہے ،نواز شریف نے اپنی ذات کیلئے پاکستان کے آئین کا مذاق بنوایا ،انہوں نے کہا کہ پاکستانی عوام کا عدلیہ پر اعتماد بحال ہوا، آج کا دن تاریخی ہے ، شق کالعدم نہیں ہوئی بلکہ عدلیہ نے چوروں کا آئینی رستہ بند کر دیا ہے ۔ واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا کہ 62, 63 پر پورا نہ اترنے والا شخص پارٹی صدارت کا عہدہ نہیں رکھ سکتا، اس کے ساتھ ہی نوازشریف کی جانب سے بطور پارٹی صدر کی جانے والی سینٹ کے امیدواروں کی نامزدگیاں بھی کالعدم قرار دے دی گئی ہیں جس کے ساتھ ہی نوازشریف کے بطور پارٹی صدر کیے گئے تمام اقدامات کو کالعدم قرار دے دیاگیا ہے، سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں قرار دیا ہے کہ سابق وزیرِ اعظم میاں محمد نواز شریف پارٹی صدارت کیلئے بھی نا اہل ہوگئے ہیں، سپریم کورٹ آف پاکستان نے سابق وزیرِ اعظم میاں محمد نواز شریف کو پاکستان مسلم لیگ (ن) کی صدارت سے نااہل قرار دیتے ہوئے ان کی جانب سے ماضی میں کیے گئے تمام فیصلوں کو بھی کالعدم قرار دے دیا ہے۔فیصلے میں نواز شریف کی جانب سے جاری کیے گئے تمام سینٹ ٹکٹ بھی منسوخ کر دیے گئے ہیں۔ چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کا اپنے فیصلے میں کہنا تھا کہ کوئی بھی نااہل شخص پارٹی کا سربراہ نہیں بن سکتا۔ چیف جسٹس نے اپنے فیصلے میں کہا کہ طاقت کا سرچشمہ صرف اللہ تعالیٰ کی ذات ہے، عوام اپنی طاقت کا استعمال عوامی نمائندوں کے ذریعے کرتے ہیں۔ آرٹیکل 62 اور 63 پر پورا نہ اترنے والا پارٹی صدارت بھی نہیں کر سکتا۔ آرٹیکل 17 سیاسی جماعت بنانے کا حق دیتا ہےجس میں بھی قانونی شرائط موجود ہیں۔ واضح رہے کہ آج سپریم کورٹ نے الیکشن ایکٹ 2017ء کے خلاف دائر درخواستوں پر سماعت مکمل کی، اس موقع پر چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیے کہ کسی پارلیمینٹرین کو چور اچکا نہیں کہا، الحمد اللہ ہمارے لیڈر اچھے ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا پارٹی سربراہ کا عہدہ انتہائی اہم ہوتا ہے۔ لوگ اپنے لیڈر کے لیے جان قربان کرنے کے لیے تیار ہوتے ہیں، ہمارے کلچر میں سیاسی جماعت کے سربراہ کی بڑی اہمیت ہے۔اس فیصلے کے بعد سینٹ کے انتخابات معطل کر دیے گئے۔

Like Our Facebook Page

Latest News